Thursday, March 10, 2022

بلاول بھٹو زرداری کے حوالے سے نئی نظم کانپیں ٹانگ جاتی ہیں

 



 سمندر میں اترتا ہوں تو کانپیں ٹانگ جاتی ہیں

تری آنکھوں کو پڑھتا ہوں تو کانپیں ٹانگ جاتی ہیں


تیرے کوچے سے اب میرا تعلق واجبی سا ھے             

مگر جب بھی گزرتا ہوں تو کانپیں ٹانگ جاتی ہیں


تمہارا نام لکھنے کی اجازت چھن گئی جب سے

کوئی بھی چہرہ پڑھتا ہوں تو کانپیں ٹانگ جاتی ہیں


ارادہ روز کرتا ہوں کہ اُن سے حالِ دل کہہ دوں

مگر وہ روبرو آئیں  تو  "کانپیں ٹانگ"  جاتی  ہیں

___________________

No comments:

Post a Comment

Phemex Withdrawl method 100% Working

  For withdrawl method click on the link below Link